بھارتی اداکاروں کی اذان کے خلاف مہم،ایک اور اداکار نے اذان کی اذان کے بارے میں ہرزہ سرائی


بھارتی اداکاروں کی اذان کے خلاف مہم،ایک اور اداکار نے اذان کی اذان کے بارے میں ہرزہ سرائی
اُردو آفیشل۔ بھارتی فلم انڈسٹری کی ناکام اداکارہ سوچیترا کرشنا مورتی نے سونونگم کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اذان کو ’’غیر مہذب‘‘ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر انسان صبح تقریباً 5 بجے کام کرکے گھر واپس آئے تو اذان کی آواز سے بہت پریشانی ہوتی ہے۔ایسا لگتا ہے بھارتی اداکاروں نے ’’اذان‘‘ کے خلاف مہم شروع کر رکھی ہے؛ ابھی ایک اداکار اذان کے بارے میں نازیبا گفتگو کرکے خاموش نہیں ہوتا کہ دوسرا بول پڑتا ہے۔

کچھ عرصہ قبل گلوکار سونونگم نے ’’اذان‘‘ کو شور قراردیتے ہوئے کہا تھا کہ بھارت سے آخر یہ جبری مذہب پرستی کب ختم ہوگی، ان کی جانب سے کیے گئے اذان مخالف ٹویٹس نے بھارت سمیت پوری دنیا کے مسلمانوں کے جذبات مجروح کیے تھے اور ان کی اس حرکت پرسوشل میڈیا صارفین کے ساتھ بالی ووڈ کی دیگر شخصیات نے بھی انہیں کڑی تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ یہ معاملہ ابھی ٹھنڈا ہوا ہی تھا کہ بالی ووڈ کی ایک اور ناکام اداکارہ اور گلوکارہ سوچیترا کرشنا مورتی نے بھی اذان کی آواز کے خلاف ٹویٹ کرکے ایک بار پھر مسلمانوں کو مشتعل کردیا۔

گزشتہ روز سوچیترا نیاذان مخالف ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ جب آپ کام کرکے صبح کے:45 4 پر اپنے گھر آتے ہیں اور آپ کے کانوں میں اذان کی آواز آتی ہے تو بہت پریشانی ہوجاتی ہے۔انہوں نے لکھا کہ میں عبادت، یوگااور ریاض کیلئے صبح اٹھتی ہوں، مجھے اپنے فرض کی ادائیگی کو یاد کرنے کیلئے لاؤڈ اسپیکر کی ضرورت نہیں ہوتی۔انہوں نے مزید لکھا کہ کسی کو بھی اذان اور عبادت کرنے کے طریقے پر اعتراض نہیں لیکن صبح کے 5 بجے اگر کوئی شخص اپنے ہمسایوں سمیت اذان کی آوازسے جاگتا ہے تو یہ بہت ’’غیرمہذب‘‘ بات ہے۔

سوچیترا کی جانب سے کیے جانے والے ٹویٹس پر بھارتی سماج وادی پارٹی کی لیڈر جوہی سنگھ نے طنز کرتے ہوئے کہا، ’’مجھے سمجھ نہیں آتا کہ ہمارے ارد گرد کس طرح کے لوگ موجود ہیں جو بولنے سے پہلے ایک بار بھی نہیں سوچتے کہ ان کے جانب سے دیئے جانے والے بیانات کا اثر لوگوں پر کس طرح ہوگا۔‘‘ انہوں نے کہا شاید اداکارہ کی نیند ’’اذان‘‘ سے زیادہ اہم ہے جبھی تو انہیں اذان کی آواز سے تکلیف ہوتی ہے۔

You cannot copy content of this page