این اے آر سی کی زمین پر رہائشی کالونی،سپریم کورٹ نے وزیرِ اعظم کو سمری پر کارروائی سے روک دیا

news-1441299787-7463

اسلام آباد(روزنامہ۔۔۔۔۔03ستمبر 2015)سپریم کورٹ نے وزیرِ اعظم کو زرعی تحقیق کے ادارے ’نیشنل ایگری کلچرل ریسرچ کونسل‘ (این اے آر سی) کی زمین پر رہائشی کالونی بنانے سے متعلق سمری پر کارروائی سے روک دیا ہے۔عدالت نے کہا ہے کہ اگر بااثر افراد کو اسلام آباد میں اپنے محل بنانے ہیں تو وہ خود زمینیں خرید کر بنائیں، سرکاری اراضی کو مالِ مفت کے طور پر استعمال نہ کیا جائے۔چیف جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے جمعرات کو این اے آر سی کے ملازمین کی جانب سے دائر کی گئی درخواست کی سماعت کی۔ اس درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ سنہ 1977 میں زرعی اجناس پر تحقیق کے لیے وفاقی تحقیقاتی ادارے سی ڈی اے سے 1,300 ایکڑ اراضی لیز پر لی گئی تھی۔درخواست میں مزید کہا گیا کہ اس لیز کی مدت سنہ 2005 میں ختم ہو گئی تھی لیکن وہاں ابھی تک غیر ملکی اداروں کے ساتھ مل کر زرعی اجناس پر تحقیق ہو رہی ہے۔ایک درخواست گزار محمد الطاف نے عدالت کو بتایا کہ سی ڈی اے نے اس زمین پر رہائشی کالونی بنانے کے لیے کابینہ ڈویڑن کو ایک سمری بھجوائی تھی جسے سیکریٹری کابینہ ڈویڑن نے منظوری کے لیے وزیر اعظم کو بھجوا دیا ہے۔درخواست گزار کا کہنا تھا کہ اگر زرعی اجناس پر تحقیق رک گئی تو زرعی شعبے میں ترقی کا عمل متاثر ہو گا۔سی ڈی اے کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ چونکہ این اے آر سی کو دی جانے والی لیز ختم ہوگئی ہے اس لیے اب یہ سی ڈی اے کا اختیار ہے کہ وہ اس زمین کو جس طرح چاہے استعمال میں لائے۔ اس پر بینچ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ یہ زمین لوگوں کے پیسے سے خریدی گئی ہے اور یہ کسی کی ذاتی جاگیر نہیں ہے۔جسٹس جواد ایس خواجہ کا کہنا تھا کہ اگر کسی کو محل بنانے کے لیے جگہ چاہیے تو وہ خود جا کر زمین خریدے، سرکاری زمین پر ہاتھ صاف کرنے کی کوشش نہ کرے۔عدالت نے اس درخواست پر فیصلہ ہونے تک وزیر اعظم کو اس سمری پر مزید کارروائی سے روک دیا ہے۔عدالت نے فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے اس درخواست کی سماعت 16 ستمبر تک ملتوی کر دی۔واضح رہے کہ کابینہ ڈویڑن نے وزیر اعظم نواز شریف کو این اے آر سی کی جگہ پر رہائشی کالونی بنانے سے متعلق سمری ارسال کی تھی۔حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ ’ن‘ کے اسلام آباد سے منتخب ہونے والے رکنِ قومی اسمبلی ڈاکٹر طارق فضل پر الزام ہے کہ وہ این اے آرسی کی اس زمین پر رہائشی کالونی بنانے کے منصوبے کی حمایت کر رہے ہیں، جبکہ خوراک کے وفاقی وزیر سکندر حیات بوسن نے اس منصوبے کی مخالفت کی تھی۔

دلچسپ عنوان
  متحدہ قومی موومنٹ نے حکومت کے ساتھ قومی و صوبائی اسمبلیوں اور سینیٹ سے استعفوں کی واپسی کے معاملے پر ہونے والے مذاکرات ختم کرنے کا اعلان کر دی