امام صاحب کا بیوی کو نماز کیلئے جگانے کا دلچسپ مشورہ


اسلام آباد ( 31جولائی 2017)ﺍﺱ ﺩﻥ ﻭﮦ ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﮭﮍﺍ ﺗﮭﺎ ، ﺍﻭﺭ ﻃﮯ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺁﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺍﻥ ﺳﮯ ﭘﻮچھ ﮐﺮ ﺭہے ﮔﺎ. ﺍﯾﮏ ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﭘﮑﮍﺍﺋﯽ ہی ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ، ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺋﻠﯿﭧ ﮔﯿﭧ ﺳﮯ ﯾﻮﮞ Eject ہوﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﯾﻒ 16 ﮐﺎ ﭘﺎﺋﯿﻠﭧ ﺍﯾﻤﺮﺟﯿﻨﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺮﺍﺷﻮﭦ ﺳﻤﯿﺖ ﭼﮭﻼﻧﮓ ﻟﮕﺎﺗﺎ ہے.

ﺟﻮﻧﮩﯽ ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺩﻋﺎ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﻣﯿﻦ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﺎ ، ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﻤﯿﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻧﻤﺎﺯﯼ ﭼﻮﻧﮏ ﮔﺌﮯ ،ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﮎ ﺩﻡ ﺳﮯ ﺩﺍﯾﺎﮞ ہاتھ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺑﺎﺋﯿﺎﮞ ہاتھ ﺍﺱ ﭘﮧ ﻟﭩﺎ ﮐﺮ Review ﮐﺎ ﺳﺎ ﭘﻮﺯ ﺑﻨﺎﯾﺎ ، ﺷﮑﺮ ہے ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﮐﺮﮐﭧ ﺳﮯ ﺩﻟﭽﺴﭙﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺳﮕﻨﻞ سمجھ ﮔﺌﮯ ، ﻭﺭﻧﮧ ﺍﯾﺴﯽ ﺣﺮﮐﺖ ﺗﻮ ﮔﺴﺘﺎﺧﯽ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﺎﺭ ہوﺗﯽ ہے.  ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺳﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﺍﺿﻄﺮﺍﺭ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ہو ﮔﯿﺎ ﻭﮦ ﺍﺳﮯ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﺮﺗﮯ ہوﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺳﭩﮉﯼ ﺭﻭﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍھے. ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ہوﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﺳﺎﺋﻞ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎتھ کچھ ﯾﻮﮞ ﭼﻤﭩﺎ ہوﺍ ﺗﮭﺎ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮐﭧ ﮐﯿﭙﺮ ﺑﯿﭩﺴﻤﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﭼﭙﮑﺎ ہوﺗﺎ ہے. ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﯿﭩﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺳﯿﭧ ﭘﮑﮍ ﻟﯽ! ہاﮞ ﺑﮭﺊ ﮐﯿﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ہے ﺁﭖ ﮐﺎ ؟ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﺳﺘﻔﺴﺎﺭ ﮐﯿﺎ ! ﺟﻨﺎﺏ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﯾﮧ ہے ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺟﺎ ﮐﺮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﻮ ﻧﻤﺎﺯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﮕﺎﺗﺎ ہوﮞ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺑﻨﺪﯼ ﺍﭨﮭﺘﯽ ﻧﮩﯿﮟ ہے.ﺁﺩھا ﮔﮭﻨﭩﮧ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﺎ ہے ﺑﻌﺾ ﺩﻓﻌﮧ ﺗﻮ ﻟﮕﺘﺎ ہے ﺷﺎﯾﺪ ﻧﻤﺎﺯ ﮐﺎ ﻭﻗﺖ ہی ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ ہے ، ﺍﺳﯽ ﭨﯿﻨﺸﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﺷﺘﮯ ﮐﺎ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮬﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ کچھ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮈﯾﻮﭨﯽ ﭘﮧ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎ ہے ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﮐﺎﻓﯽ ﻋﺮﺻﮯ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ہے ﺍﺏ ﻧﻮﺑﺖ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ گئی ہے ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻓﯿﻤﻠﯽ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﭘﯿﮏ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ہوﮞ ﻧﮧ ﺭہے ﺑﺎﻧﺲ ﻧﮧ ﺑﺠﮯ باﻨﺴﺮﯼ ! ﭘﮭﺮ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﭼﻠﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﮯ ہیں ﺷﺎﯾﺪ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﻋﯽ ﺣﻞ ﻧﮑﻞ ﺁﺋﮯ ، ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺷﻮﮔﺮ ہے ، ﺍﺱ ﮐﻮ ﺭﺍﺕ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﻧﯿﻨﺪ ﺁﺗﯽ ہے ﭘﮭﺮ ﻏﺼﮧ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﺁﺗﺎ ہے ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ کچھ ﮈﺭ ﺑﮭﯽ ﻟﮕﺘﺎ ہے !!ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮔﮩﺮﯼ ﺳﻮﭺ ﻣﯿﮟ ﮈﻭﺏ ﮔﺌﮯ ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﭧ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﮍﯼ ﺻﻨﺪﻭﻗﭽﯽ ﮐﻮ ﮐﮭﻮﻻ ، ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ہاتھ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﺍﺳﮯ ﮐﮭﻨﮕﺎﻟﺘﮯ ﺭہے ﺟﯿﺴﮯ ﻣﭽﮭﻠﯽ ﭘﮑﮍ ﺭہے ہوﮞ ، ﺁﺧﺮﮐﺎﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﺧﺘﻢ ہوﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭨﺎﺋﯿﮕﺮ ﺑﺎﻡ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﭨﯿﻮﺏ ﻧﮑﺎﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺳﺎﺋﻞ ﮐﮯ ہاتھ ﻣﯿﮟ ﭘﮑﮍﺍ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ،، ﺗﻢ ﺍﺳﮯ ہاتھ ﭘﮧ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺳﺎ ﻣﻞ ﮐﺮ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﺎ ﭼﮑﺮ ﻟﮕﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﮬﺮ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺅ. ﺍﻟﻠﮧ ﺳﺐ اچھا ﮐﺮﮮ ﮔﺎ !! ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ کچھ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻟﻨﺎ ، ﻧﮧ ﺍﺳﮯ ﺟﮕﺎﻧﺎ. ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﯿﻞ ﻧﻤﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺏ ﮔﮭﺮ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮐﺮﻧﺎ ! ﺳﺎﺋﻞ ﮐﻨﻔﯿﻮﺯ ﺳﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﺗﮭﺎ ، ﻭﮦ ﺑﮯ ﺩﻟﯽ ﺳﮯ ﭼﻠﺘﺎ ہوﺍ ﮔﮭﺮ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﭺ ﻣﯿﮟ ﮈﻭﺑﯽ ہوﺋﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﭨﺎﺋﯿﮕﺮ ﺑﺎﻡ ہاتھ ﭘﮧ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﯽ ﭼﺎﺭﭘﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮔﯿﺎ ﭘﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﻣﮍﺍ ، ﭘﮭﺮ ﭼﺎﺭﭘﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮔﯿﺎ ، ﭘﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﻣﮍﺍ. ﺑﺲ ﺍﺑﮭﯽ ﻭﺍﭘﺲ ﻣﮍﺍ ہی ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﻭﺍﻻ ﺍﺳﭩﯿﻞ ﮐﺎ ﮔﻼﺱ ﺍﮌﺗﺎ ہوﺍ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭨﮭﺎﮦ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﮧ ﻟﮕﺎ ، ﺍﯾﮑﺸﻦ ﺍﺗﻨﺎ ﻏﯿﺮ ﻣﺘﻮﻗﻊ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﺮﺍﮦ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ . ﻭﮦ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﮐﮧ ﮔﻼﺱ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﻭﭘﺮ ﺳﮯ ﮔﺮﺍ ہے ﻣﮕﺮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﯾﮧ ﻏﻠﻂ ﻓﮩﻤﯽ ﺑﮭﯽ ﺩﻭﺭ ﮐﺮ ﺩﯼ. ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭘﺘﮧ ہے ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﺑُﻮ ﺳﮯ ﺍﻟﺮﺟﯽ ہے ، ﺍﺏ ﺳﺎﺭﺍ ﺩﻥ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﯿﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺮ ﺩﺭﺩ ﮐﺮﺗﺎ ﺭہے ﮔﺎ. ﻭﮦ ﭼﮭﭙﺎﮎ ﺳﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺑﺎہر ﻧﮑﻞ ﺁﯾﺎ ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯﮮ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺟﮕﮧ ہاتھ ﭘﮭﯿﺮﺍ ﺟﮩﺎﮞ ﮔﻼﺱ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ، ﻭہاﮞ ﮔﮭﻮﻣﮍ ﻋﺮﻑ ﮔﺮﻭﮌﺍ ﻧﮑﻞ ﺁﯾﺎ ﺗﮭﺎ.ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺎ ﻧﻤﺒﺮ ﻣﻼﯾﺎ ﻧﻤﺒﺮ ﻣﻠﺘﮯ ہی ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ہشاﺵ ﺑﺸﺎﺵ ﺁﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﮧ ہاﮞ ﺑﮭﺌﯽ ﮐﺎﻡ ہو ﮔﯿﺎ ؟ ﺟﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﺎ ہو ﮔﯿﺎ ہے . ﻭﮦ ﻧﻤﺎﺯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﮭﭧ ﺳﮯ ﺍٹھ گئی، ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﯾﺪ ﺍﮔﻠﯽ ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﻧﻤﺎﺯﯾﮟ ﺑﻐﯿﺮ ﭨﻮﭘﯽ ﮐﮯ ﭘﮍھوﮞ ﮔﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺳﺮ ﭘﮧ ﮔﺮﻭﮌﺍ ﻧﮑﻞ ﺁﯾﺎ ہے ﻭﮦ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﻞ ﺁﯾﺎ ﺗﮭﺎ ، ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺧﻮﺷﺪﻟﯽ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ! ﺑﺲ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﺅ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺎﺭﺍ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ؟ ﺟﯽ ﮔﻼﺱ ! ﺍﻟﺤﻤﺪ ﻟﻠﮧ ، ﺍﻟﺤﻤﺪ ﻟﻠﮧ ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﮔﻼﺱ ﮐﮭﺎﯾﺎ ہے ، سمجھ ﻟﻮ ﺟﺎﻡِ ﮐﻮﺛﺮ ﮐﮯ ﻣﺴﺘﺤﻖ ہو ﮔﺌﮯ ہو. ﺍﺏ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻭ ﮐﮧ ﺍﺳﯽ ﭨﺎﺋﯿﮕﺮ ﺑﺎﻡ ﮐﻮ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﭘﮧ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﮔﺮﻭﮌﮮ ﭘﮧ ﺁہستہ ﺁہستہ ﺭﮔﮍﻭ ﺍﻥ ﺷﺎﺀ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﯾﮏ ﮔﮭﻨﭩﮯ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮔﺮﻭﮌﺍ ﺍﻧﺪﺭ ہوﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺍﮔﻼ ﮨﻔﺘﮧ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﮧ ﺍٹھ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﮮ ﮔﯽ. ﺍﮔﻠﮯ ہفتے ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻏﺬ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺑﺎﻡ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﺳﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺩ ﮔﻠﯽ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎ ﮐﺮ ﮐﮭﮍﮮ ہو ﺟﺎﻧﺎ. ﺍﻟﻠﮧ ﺳﺐ بھلا ﮐﺮﮮ ﮔﺎ.

You cannot copy content of this page