5سالہ معصوم پاکستانی بچی کی شادی ، دولہے کی عمر کیا ہے؟ شرمناک انکشا ف


گاؤں123سوین ای آر میں 5سالہ معصوم بچی کی 20سالہ نوجوان سے شادی کی کوشش،پولیس نے کاروائی کی بجائے مجھے ہی 3گھنٹے تھانے میں بند رکھا،متاثرہ والد،بچی کا والد جھوٹ بول رہا ہے،پولیس کا موقف،تفصیلات کے مطابق میاں چنوں کے نواحی گاؤں123سوین ای آر کے رہائشی محمد یار ساجد نور محمد قوم دُلو نے بتایا کہ وہ اپنے بھائیوں سے ملنے راولپنڈ ی گیا ہوا تھا کہ27اگست کو اُسکی بیو ینے پانچ سالہ معصوم بیٹی اقراء کی شادی 20سالہ مرتضیٰ سے کردی ، معصوم بچی کو باقاعدہ شادی کی رسومات کے بعد رُخصت کیا گیا ہے،متاثرہ شخص

نے بتایا کہ اُسکی بیٹی 20روزسے ملزمان کے پاس ہے،اُسکی جانب سے جب متعلقہ تھانے کو درخواست دی گئی تو پولیس نے کاروائی کی بجائے اُسے ہی تین گھنٹے کیلئے حوالات میں بند کردیا اوربعدازاں دھمکیاں دیکر چھوڑ دیا، دوسری طرف ڈی ایس پی تنویر احمد بھٹی نے بتایا کہ مذکورہ اُسکا اپنی بیوی سے زمین کا تنازعہ ہے وہ جھوٹا الزام لگا رہا ہے،ہم نے مکمل تحقیقات کیں ہیں بچی کا نکاح نہیں ہوا ،مگر متاثرہ شخص نے بتایا کہ میرے پاس بچی کی شادی کی رسومات کی تمام تصاویر موجود ہیں، میں اپنے بھائیوں سے ملنے راولپنڈ ی گیا ہوا تھا کہ27اگست کو اُسکی بیو ی نے پانچ سالہ معصوم بیٹی اقراء کی شادی 20سالہ مرتضیٰ سے کردی ملزمان میں دوُلہا مرتضیٰ،محمد عارف،بشیر احمد،محمد شریف،محمد رمضان اور بیوی عقیلہ بی بی شامل ہیں،متاثرہ شخص نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے فوری نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

You cannot copy content of this page